53

پاکستانی سائنسدان ڈاکٹر عطاءالرحمن کو چین کا سب سے بڑا سول ایوارڈ دے دیا گیا

ویب ڈیسک

ڈاکٹر عطاء الرحمن کو سال ٢٠٢٠ء کے لئے چائنا انٹرنیشنل سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ایوارڈ دیا گیا ہے انہیں کیمسٹری کے شعبہ میں گرانقدر خدمات پر اس اعزاز سے نوازا گیا

ڈاکٹر عطاء الرحمان نے فارماکالوجی، وائرولوجی اور نینو ٹیکنالوجی کے شعبوں میں خدمات سرانجام دیں جب کہ چین کے ساتھ آرگینک کیمسٹری ،جینیات اور زرعی سائنس کے شعبوں میں تعاون بڑھایا

ڈاکٹر عطاء الرحمان کو کیمسٹری کے شعبے میں خدمات پر چین کی سب سے بڑے فرانسیسی ایوارڈ سے نوازا گیا.ڈاکٹر عطاالرحمان کویہ ایوارڈ چینی صدر شی چنگ پنگ کی جانب سے پیش کیا گیا

واضح رہے کہ ڈاکٹر عطا الرحمان کو پاکستان میں ستارہ امتیاز، تمغہ امتیاز، ہلالِ امتیاز اور نشان امتیاز سے بھی نوازا جا چکا ہے وہ اس وقت وزیراعظم کی ٹاسک فورس برائے سائنس و ٹیکنالوجی کے سربراہ کے طور پر کام کر رہے ہیں

دو سال قبل چین نے پاکستان کے سابق وفاقی وزیر اور چیئر مین ہائیر ایجو کیشن پروفیسر ڈاکٹر عطا ء الرحمن کو چائنیز اکیڈمی آف سائنسز میں تعلیمی ماہر ،استاد اور دانشور کے طور پر تعینات کیا تھا . یہ فیصلہ چائنیز اکیڈمی آف سائنسز کے 19ویں اور چائنیز اکیڈمی آف انجینئرنگ کے 14 ویں اجلاس جس کی صدارت چین کے صدر نے کی کیا گیا

اسی تقریب میں نوبل انعام یافتہ سائنسدان اور رائل سوسائٹی آف لند ن کے سابق صدر سر پاول نرس کی تعیناتی بھی کی گئی

پروفیسر ڈاکٹر عطاء الرحمن مسلم دنیا کے پہلے سائنسدان ہے جن کو چین کی طرف سے یہ سب سے بڑا عزاز ملا ہے .پروفیسر ڈاکٹر عطاء الرحمن نے کیمرج یونیورسٹی سے 1968میں نامیاتی کیمیاء میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی تھی ا س کے علاوہ نامیاتی کیمیاء میں ان کی ایک ہزار سے زیادہ تحریریں جس میں سات سو سے زیادہ ریسرچ پیپر زبھی شامل ہیں بین الاقوامی طور پر شائع ہو چکے ہیں . اس کے علاوہ پروفیسر ڈاکٹر عطاء الرحمن مسلم دنیا کے پہلے سائنسدان ہیں جن کو یونیسکو کاسائنس کا سب سے بڑا ایوارڈ ملا ہے .پروفیسر ڈاکٹر عطاء الرحمن پاکستان میں وفاقی وزیر تعلیم ،وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی، چیئر مین ہائیر ایجو کیشن کمیشن رہ چکے ہیں پاکستان میں وہ واحد سائنسدان ہیں جن کو چار سول ایوارڈ سے نوازا گیا ہے جس میں تمغہ امتیاز ،ستارہ امتیاز، ہلال امتیازاور نشان امتیاز شامل ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں